Aik Do Qadam Chal Mere Sath To written by Amraha Sheikh | Novels Hub
Complete Novels

Aik Do Qadam Chal Mere Sath To

Aik Do Qadam Chal Mere Sath To written by Amraha Sheikh

کہانی سے اقتباس

ولیمے کی تقریب اپنے عروج پر تھی ہاشم اور تہذیب ساتھ کھڑے سب کی نگاہوں کا مرکز بنے ہوۓ تھے…دونوں لگ بھی تو بہت پیارے رہے تھے۔۔۔
کسی کی نگاہوں میں رشک تھا تو انہی میں ایک انسان ایسا بھی موجود تھا جس کی نگاہوں میں نفرت جلن جانے کتنے ہی جذبے دونوں کو مسکراتے ہوۓ دیکھ کر دل و دماغ میں ابھرے تھے۔۔۔۔۔
ارتضیٰ احمد جسے بچپن سے ہی ہاشم وقاص سے خدا واسطے کا بیر تھا وہ کیسے اسے خوش ہوتے دیکھ سکتا تھا
ایسا کیا ہے ہاشم میں جو آج ہر وہ چیز پا گیا۔۔۔جب کے ارتضیٰ احمد آج اس سے ایک قدم پیچھے ہی کھڑا ہے۔۔۔
“ہاشم وقاص میں تم دونوں کی یہ مسکراہٹ چھین لونگا ایسا وار کروں گا کے ہنسنا تو دور مسکراہٹ کیا چیز ہوتی ہے وہ تک بھول جاؤ گے۔۔۔
دونوں پے نظریں مرکوز کیے وہ خود ہی جل بھون کر نفرت سے سوچتا سر جھٹک کر آگے بڑھ گیا۔۔۔
اسے اب تعدیل سے کوئی سروکار ہی نا رہا ہو جیسے دل و دماغ پر ہاشم کی نفرت نے نئے سرے سے سر اٹھایا تھا۔۔۔

Amraha Sheikh is a Social Media writer and now her Novels are being written with Novels Hub. Novels Hub is a new platform for new or well-known Urdu writers to show their abilities in different genres of Urdu Adab.

Regards

Novels Hub

Aik Do Qadam Chal Mere Sath To Downloading Link

 

Complete Novel Aik Do Qadam Chal Mere Sath To Online Reading

 

For More Novels By Writer Amraha Sheikh

CLICK HERE

Tags
Show More

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button
Close
Close